عربی زبان

عربی (عربی: العربية) سامی زبانوں میں سب سے بڑی زبان ہے اور عبرانی اور آرامی زبانوں سے بہت ملتی ہے۔ جدید عربی کلاسیکی یا فصیح عربی کی تھوڑی سی بدلی ہوئی شکل ہے۔ فصیح عربی قدیم زمانے سے ہی بہت ترقی یافتہ شکل میں تھی اور قرآن کی زبان ہونے کی وجہ سے زندہ ہے۔ فصیح عربی اور بولے جانے والی عربی میں بہت فرق نہیں بلکہ ایسے ہی ہے جیسے بولے جانے والی اردو اور ادبی اردو میں فرق ہے۔ عربی زبان نے اسلام کی ترقی کی وجہ سے مسلمانوں کی دوسری زبانوں مثلاً اردو، فارسی، ترکی وغیرہ پر بڑا اثر ڈالا ہے اور ان زبانوں میں عربی کے بے شمار الفاظ موجود ہیں۔ عربی کو مسلمانوں کی مذہبی زبان کی حیثیت حاصل ہے اور تمام دنیا کے مسلمان قرآن پڑھنے کی وجہ سے عربی حروف اور الفاظ سے مانوس ہیں۔ تاریخ میں عربی زبان کی اہمیّت کے سبب بہت سے مغربی زبانوں میں بھی اِس کے الفاظ وارد ہوئے ہیں۔

العربية
اردو: عربی
عربی_رسم_الخط میں لفظ العربية اعراب کے ساتھ (نویسہ: نسخ)
تلفظ ال-عَربِیہ
مستعمل عرب ممالک مشرق وسطیٰ ، شمالی افریقہ ، اسلام کی مذہبی زبان
کل متتکلمین تقریباً 280 ملین پیدائشی مکلمین [1] اور 250 ملین غیر پیدائشی مکلمین[2]
رتبہ 5 (پیدائشی مکلمین ایتھنولوگ تخمینہ)
خاندان_زبان افریقی ایشیائی
نظام کتابت عربی ابجد ، شامی ابجد (گرشونی) ،
باضابطہ حیثیت
باضابطہ زبان 25 ممالک میں دفتری زبان کی حیثیت حاصل ہے ۔ ، انگریزی اور فرانسیسی کے بعد دفتری زبانوں میں تیسرا رتبہ [3]
نظمیت از  اردن: مجمع اللغة العربیة الاردني


 الجزائر: المجلس الأعلى للغة العربیة بالجزائر ()
 سوڈان: مجمع اللغة العربية بالخرطوم (عربی زبان اکادمی ، خرطوم)
 عراق: المجمع العلمي العراقي في بغداد (عراقی سائنس اکادمی)

 تونس: مؤسسة بيت الحكمة
 سوریہ: مجمع اللغة العربية بدمشق
 لیبیا: مجمع اللغة العربية الليبي


 مصر: مجمع اللغة العربية بالقاهرة

 مراکش: عربی زبان اکادمی
 اسرائیل: مجمع اللغة العربية في حيفا[4]

رموزِ زبان
آئیسو 639-1 ar
آئیسو 639-2 ara
آئیسو 639-3 ara

عربی زبان بولنے والی دنیا کا نقشہ۔
سبز: واحد سرکاری زبان
نیلا: شریک سرکاری زبان

عربی کے کئی لہجے آج کل پائے جاتے ہیں مثلاً مصری، شامی، عراقی، حجازی وغیرہ۔ مگر تمام لہجے میں بولنے والے ایک دوسرے کی بات بخوبی سمجھ سکتے ہیں اور لہجے کے علاوہ فرق نسبتاً معمولی ہے۔ یہ دائیں سے بائیں لکھی جاتی ہے اور اس میں ھمزہ سمیت29 حروف تہجی ہیں جنہیں حروف ابجد کہا جاتا ہے۔

عربی کی وسعت فصاحت و بلاغت کا اندازہ اس بات سے کیا جا سکتا ہے کہ حروف تہجی میں سے کوئی سے تین حروف کسی بھی ترتیب سے ملا لئے جائیں تو ایک بامعنی لفظ بن جاتا ہے۔

عربی درج ذیل ممالک میں سرکاری زبان کی حیثیت رکھتی ہے:

یہ درج ذیل ممالک کی قومی زبان بھی ہے:

مزید دیکھیے

Ghghgggtubyi yuhvvy hu

حوالہ جات

  1. S. Procházka, 2006, "Arabic"، Encyclopedia of Language and Linguistics, 2nd edition
  2. Ethnologue (1999)
  3. John W. Wright۔ نیو یارک ٹائمز Almanac 2002۔ Routledge۔ آئی ایس بی این 1-57958-348-2۔
  4. Knesset approves Arabic academy – Israel News, Ynetnews

    بیرونی روابط

    This article is issued from Wikipedia. The text is licensed under Creative Commons - Attribution - Sharealike. Additional terms may apply for the media files.