جنگی جرائم

دوسری جنگ عظیم سے قبل اگر کچھ افراد یا جماعتیں ایسے کام کرتی تھیں جو تسلیم شدہ بین الاقوامی قانون جنگ کے منافی ہوں تو وہ جنگی جرائم متصور ہوتے تھے۔ مثلا مقبوضہ ممالک کے باشندوں یا غیر لڑاکا فوجیوں کا جنگی سرگرمیوں میں ملبوث ہونا۔ عارضی صلح ہو جانے کی صورت میں بھی قتل و غارت گری اور متشددانہ کاروائیاں جاری رکھنا یا صلح کے سفیروں پر گولی چلانا جنگی جرائم کے ذیل میں آتا تھا۔ دوسری جنگ عظیم کے بعد بین الاقوامی جنگی ٹریبونل نے جارحانہ جنگ کے منصوبے باندھنا، شہری آبادی کو قتل کرنا، اس سے بدسلکوکی کرنا یا غلامانہ مزدوری کرانے کے لیے لوگوں کو دوسرے ملک میں لے جانا بھی جنگی جرائم میں شامل کر دیے۔

War Crimes

This article is issued from Wikipedia. The text is licensed under Creative Commons - Attribution - Sharealike. Additional terms may apply for the media files.