تائیوان

تائیوان (Taiwan) (تلفظ: i/ˌtˈwɑːn/؛ چینی: 臺灣 یا 台灣; پینین: Táiwān) کا رسمی نام جمہوریہ چین ہے۔ عمومی طور پر تائیوان کہتے ہیں۔ اس کا پرانا نام فارموسا ہے۔وہ ممالک جو اقوام متحدہ کے رکن نہیں ہیں ان میں تائیوان سب سے زیادہ آبادی والا ملک ہے۔ تائیوان پر چین کا دعوٰی ہے کہ یہ عوامی جمہوریہ چین کا حصہ ہے اور چین اسے اپنا ایک اکائی مانتا ہے۔ چینگ خاندان کے زوال کے بعد چین کے مرکزی علاقے پر عوامی جمہوریہ چین کا ریاست قائم ہوا جبکہ تائیوان پر جاپانیوں نے قبضہ کیا اور یہ علاقہ ان کے یراقتدار آیا۔ جب جاپان نے 1945 میں جنگ کے دوران میں ہتھیار ڈال دیے اس وقت تائیوان جمہوریہ چین کے قبضے میں جبکہ چین کے دیگر علاقے کمیونسٹوں کے قبضے میں آئے۔ اس وقت جمہوریہ چین (تائیوان) اپنے آپ کو چین سرزمین کا اصل اور جائز حکومت مانتی ہے جبکہ عوامی جمہوریہ چین اور چین کی کمیونسٹوں کو قابضین کی نگاہ سے دیکھتی ہے۔ دوسری طرف عوامی جمہوریہ چین بحی اسے جائ حکومت تسلیم نہیں کرتی اور وہ ممالک جو تائیوان (جمہوریہ چین) سے تعلقات قائم کریں گے ان سے تمام تر سفارتی تعلقات ختم کرنے کا اعلان کر چکی ہے۔ اس لئے عالم سطح پر زیادہ تر ممالک جن کا کسی نہ کسی قسم کا انحصار عوامی جمہوریہ چین پر ہے یا اس سے تعلق ہے وہ تائیوان کو بطور ملک تسلیم نہیں کرتے۔

جمہوریہ چین
Republic of China

中華民國
Zhōnghuá Mínguó
پرچم National emblem
ترانہ: "umer of the Republic of China"
depicting only the area under the ROC's jurisdiction
دار الحکومت
اور سب سے بڑا شہر
تائی پے [1]سانچہ:Ref num
25°02′N 121°38′E
دفتری زبانیں معیاری چینی[2] (spoken)
روایتی چینی حروف (written)
تسلیم شدہ علاقائی زبانیں تائیوانی ہاکیئن[3]
نام آبادی Taiwanese[4][5][6] and/or چین کے لوگ[7]
حکومت Semi-presidential system
 President
Ma Ying-jeou
 Vice President
Vincent Siew
 Premier
Liu Chao-shiuan
مقننہ Legislative Yuan
Establishment Xinhai Revolution
 Start of Xinhai Revolution
10 اکتوبر 1911
 Republic established
1 جنوری 1912
 Taiwan acquired from Japan
25 اکتوبر 1945
 Government moved to Taipei, Taiwan
7 دسمبر 1949
رقبہ
 کل
36,191 کلومیٹر2 (13,973 مربع میل) (136th)
 آبی (%)
10.34
آبادی
 2009 تخمینہ
23,063,027[8]سانچہ:Ref num (50th)
 کثافت
(15th)
خام ملکی پیداوار (مساوی قوت خرید) 2008 تخمینہ
 کل
$695.39 billion (19th)
 فی کس
$31,892 (26th)
خام ملکی پیداوار (برائے نام) 2008 تخمینہ
 کل
$383.347 billion (24th)
 فی کس
$18,306 (41st)
انسانی ترقیاتی اشاریہ (2015)  0.885[lower-alpha 1]
انتہائی اعلی · 27th
کرنسی New Taiwan dollar (NT$) (TWD)
منطقۂ وقت CST (متناسق عالمی وقت+8)
not observed (متناسق عالمی وقت)
تاریخ ہیئت yyyy-mm-dd
yyyy年m月d日
(CE; چینی تقویم) or 民國yy年m月d日
ڈرائیونگ سمت right
کالنگ کوڈ +886
انٹرنیٹ ڈومین Tw.
a. ^ Before relocating to Taiwan, the capital of the ROC was نانجنگ۔ After the relocation of government to Taiwan, چیانگ کائی شیک declared تائی پے as the wartime capital. However, بمطابق 2009، the constitution does not mention the name of the ROC capital; therefore, some argue that the de jure capital is still نانجنگ۔ However, the ROC does not currently control it.
b. ^ Population and density ranks based on 2008 figures.
تائپے شہر میں صدری دفتر۔

حوالہ جات

  1. "Yearbook 2004"۔ Yearbook۔ Government Information Office of the Republic of China۔ Taipei is the capital of the ROC
  2. "Taiwan (self-governing island, Asia)"۔ Britannica Online Encyclopedia۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2009-05-07۔
  3. "Taiwan Information: People and Language"۔ Asia-planet.net (Information provided by Tourism Bureau, ROC)۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2009-06-11۔ The official language of Taiwan is Mandarin Chinese (Guoyu)، but because many Taiwanese are of southern Fujianese descent, Min-nan (the Southern Min dialect, or Holo) is also widely spoken. The smaller groups of Hakka people and aborigines have also preserved their own languages. Many elderly people can also speak some Japanese, as they were subjected to Japanese education before Taiwan was returned to Chinese rule in 1945 after the Japanese occupation which lasted for half a century.
  4. "The ROC's Humanitarian Relief Program for Afghan Refugees"۔ Gio.gov.tw۔ اخذ شدہ بتاریخ 2009-05-07۔
  5. "Taiwanese health official invited to observe bird-flu conference"۔ Gio.gov.tw۔ اخذ شدہ بتاریخ 2009-05-07۔
  6. "Demonyms – Names of Nationalities"۔ Geography.about.com۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2009-05-07۔
  7. Sections 26, 64, 91, 141, 151 and 167 of the ROC constitution imply that the ROC citizens are Chinese. See also the National identity section.
  8. "Area and Number of Villages, Neighborhoods, Households and Resident Population"۔ MOI Statistical Information Service۔
  9. "Key Figures for Calculating Composite Gender Equality Index"۔ National Statistics, Republic of China (Taiwan) (Chinese زبان میں)۔ Directorate General of Budget, Accounting and Statistics, Executive Yuan, R.O.C.۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 مارچ 2018۔
 یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔
  1. The UN has not calculated an HDI for the ROC, which is not a member nation. The ROC government calculated its HDI for 2015 to be 0.885, which would rank it 27th among countries.[9]
This article is issued from Wikipedia. The text is licensed under Creative Commons - Attribution - Sharealike. Additional terms may apply for the media files.